Birote

Birote a Town near Murree Hills, on the way to Kashmir, one the Beautiful Places of Pakistan.

[01/21/18]   گالی ہی تہذیب ہے
وسعت اللہ خان
تجزیہ کار

جب اس صدی نے ہی فکری و عملی انتہا پسندی سے جنم لیا ہے تو پھر زبان و بیان کے بارے میں اعتدالئے کی توقع کرنا نرا حمق ہے ۔یہ ’آپ جناب، حضور قبلہ‘ جیسے آداب ِگفتگو نبھانے کا نہیں ’ابے تو کیا چیز کتے‘ کا دبنگ دور ہے۔

گئے وہ دن جب حضرتِ اقبال ’جعفر از بنگال صادق از دکن‘" کو ’ننگ ِ ملت ننگِ دیں ننگِ وطن ‘ کی گالی دے کر مطمئن سو جاتے تھے۔ جناح صاحب نے سب سے بڑی گالی بھلا دی بھی تو کیا ؟ ’ابوالکلام آزاد شو بوائے آف کانگریس ہیں۔‘

کیا زمانہ تھا کہ عطا اللہ شاہ بخاری اور شورش کاشمیری بھی دشنام کو ادبی چاکلیٹ میں ڈبو کے پیش کرتے تھے۔ بھٹو کا زخیرہِ دشنام چوہے اور ڈبل بیرل خان اور سور کے بچو سے آگے نہ بڑھ سکا۔ ضیا الحق کی گالی ’سیاستدان میرے پیچھے دم ہلاتے آئیں گے‘ پر ختم ہوگئی۔ پرویز مشرف نے قاضی حسین احمد کو نفسیاتی مریض اور ریپ زدہ خواتین کو مغربی ممالک کی شہریت کا لالچی قرار دینے پر ہی بس کر دی۔

لیکن آج کی سیاسی نسل کی قوتِ برداشت اور شائستگی کا امتحان یہ ہے کہ کس کی گالی زیادہ جاندار اور کس کی پھسپھسی ہے۔ جتنی زو معنی اور فحش گفتگو اتنی ہی جاندار لیڈری۔

جدید سیاسی بیانیے اور انشا پردازی کے سیموئیل جانسن، کیٹس، محمد حسین آزاد اور مولوی عبدالحق دراصل ڈونلڈ ٹرمپ، مودی، یوگی آدتیا ناتھ، ایمن الزواہری، الطاف حسین، خواجہ آصف، شیخ رشید، عمران خان اور خادم حسین رضوی وغیرہ وغیرہ ہیں۔ جس کو ڈانس نہیں کرنا ہے جا کے اپنی بھینس چرائے۔

یہ اکابرینِ دشنام ایسی پاپولر ہستیاں ہیں جو لاکھوں کے لیے رول ماڈل اور ان کا ہر لفظ ، ٹویٹ، تقریر اور پریس کانفرنس مشعلِ راہ ہے۔ اگر وہ ایک گالی دیتے ہیں تو بے شمار تقلید پسند اسے مثالیہ جان کر سوشل میڈیا سکرینز کو دس گنا زیادہ جدت آمیز تھوکیلی مغلظات سے بھر دیتے ہیں۔

ان رہنماؤں کے دشنامی جملوں اور فرمودات کو تبرک سمجھ کے مدلل دفاع کیا جاتا ہے۔ لسانی موتی جان کے شاعری اور گیتوں میں ڈھالا جاتا ہے۔ ایڈیٹنگ کا زیور پہنا کر اور پر کشش بنایا جاتا ہے۔

اگر ثبوت درکار ہو تو سوشل میڈیا پے مقبولیت کے پائیدان پر سب سے اوپر علامہ خادم حسین رضوی کی شہرہِ آفاق ’پین دی سری‘ سے تخلیق ہونے والے نثری ، بصری و نغماتی شاہکار دیکھ لیں۔ گجرات کے دنگوں میں مرنے والے مسلمانوں پر افسوس کا اندازِ مودی ملاحظہ کر لیں۔ فرماتے ہیں ’اگر گاڑی کے نیچے ایک کتے کا پلہ آجائے تو مجھے اس کا بھی دکھ ہوگا۔‘

یوگی آدتیا ناتھ کے اس جملے پر تالیوں کی والہانہ مجمع وار گونج سن لیں کہ ’اگر انھوں نے (مسلمانوں نے) لو جہاد کا دھوکہ دے کر ایک اور ہندو لڑکی نکالی تو ہم ان کی دس لڑکیاں نکالیں گے۔‘ اس کے بعد اگر یوگی کا کوئی بھگت یہ بھی کہہ دے کہ ہم انھیں قبر سے نکال کر ریپ کریں گے تو تالیاں کیوں نہیں بجیں؟

دوسری جانب افریقی ممالک کو ’بول و براز‘ قرار دینے والے ٹرمپیانہ ٹویٹ نگاری پڑھ لیں، ترک صدر اردوغان اور اماراتی وزیرِ خارجہ کے درمیان لٹیرے اور بزدل کا ٹویٹری ملاکھڑا چیک کر لیں۔

اپنے پاکستان میں جاتی عمرہ (شریف برادران کی نجی رہائش گاہ ) کی اینٹ سے اینٹ بجانے کی دعوت اور بلاول بھٹو کو بلو رانی کا خطاب دینے والے میڈیا ڈارلنگ شیخ رشید یا پارلیمنٹ اور اس کے ارکان پر بے شمار عمرانی لعنت اور اس کی مزید وضاحت کے لیے پریس کانفرنس اور اس سے بھی پہلے ریلو کٹے، چور، ڈاکو، بے شرم، بے غیرت کے القابات کے روزمرہ پر غور فرما لیں۔

زرداری کا پیٹ چیر کر دولت نکالنے کی شہبازی بڑک یاد کر لیں، خواجہ آصف کی ٹریکٹر ٹرالی اور ’یہ عورتیں‘ کا حقارت ناک اندازِ تخاطب ملاحظہ کر لیں۔ ہر تیسرے عالم، مذہبی سیاستداں اور اینکر کے منہ میں نصب کافر ساز فیکٹری کا معائنہ کر لیں۔

مصالحہ اتنا تیز اور مقابلہ اس قدر گلا کاٹ کہ اب تو آنر ایبل چیف جسٹس ثاقب نثار کو بھی تقریب میں کہنا پڑتا ہے کہ ’مجھے ہمیشہ بتایا گیا ہے کہ تقریر عورت کے سکرٹ کی طرح ہونی چاہیے۔ اتنی لمبی بھی نہیں کہ بوریت ہو جائے اور اتنی مختصر بھی نہیں کہ موضوع تشنہ رہ جائے ۔‘ توجہ دلانے پر بعد میں وضاحت بھی کرنا پڑتی ہے کہ یہ دراصل چرچل نے کہا تھا۔

اور ان سب افکار کا تیزابی ست ہر شام انڈیا اور پاکستان کے بیسیوں ٹی وی چینلز کروڑوں گھروں کے نونہالوں کے کانوں میں ٹاک شوز کی قیف لگا کے ٹنوں کے حساب سے انڈیل رہے ہیں۔

ایسے میں کمزور دل اور کرتا پاجامہ شیروانی ٹوپی یافتہ مس فٹ شرف جو آج بھی تمیز تہذیب، سعادت مندی، گھر کی تربیت، اچھی صحبت جیسی فضولیات اور گنوار کی گالی ہنس کے ٹالی جیسے پھٹیچر محاوروں کے اسیر ہیں۔ ان کے لیے خوشخبری ہے کہ بس کچھ ہی دنوں کی زحمت ہے۔ ابدی سکون اگلے موڑ پر کھڑا ہے اور ان کی طرف آیا ہی چاہتا

[01/18/17]   مجھے زندہ نہیں رہنا کتابوں میں نصابوں میں
صدائے وقت ہوں انسان کو بیدار کرنا ہے۔

[07/15/16]   03205655200
Dr Khurram Rashid
DPO Abbotabad

You might know about transfer of SHO
This transfer done by DPO.

Please call him nd request for reverse the order.

[09/22/15]   یا الہی بصدقہ مصطفی ابر رحمت کی التجا کرتے ہیں.
(آج بیروٹ میں صبح سے بارش )

[09/18/15]   اگر آپ کے پاس بیروٹ کی کوئ خوبصورت فوٹو ہے تو ہمارے ساتھ ضرور شئر کریں، ہم آپ کے نام کے ساتھ آپ کی بھیجی ہوئ فوٹو کو شئیر کریں گے۔

[09/18/15]   If any one of you have photos of Birote you can share , we will share your photos with you name :)

[04/22/14]   School Ghar Se 8km Door Tha.Ak Din School Jany K Liy Jooty (Shoes) Nhi Thy Pass.Pesy Mangny K Liy MAA Ki Tarf Dekha To Maloom Hua Wo Ro Rahi Hy.Nangy Paon School Rawana Hua.School Me doston K Samny Sharmindge Se Bachny K Liy Kha K Kisi Me Itni Himat Hy Jo 8km Nangy Paon Chal Saky ?Janty Ho Ye Kon Tha ?Ye Thy Muhtarm JnaabAmeer Jmaat Islami pakistanSiraj- Ul- Haq Sahib.Proud to have a Leader like that.

15/04/2014

Abdul Rehman

Sent this Application to Sardar Mahtab Sb & Shamoon Yar Khan sb 5 months ago, I have sent them number of reminders but no response, is any one you thinks that following application is a serious issue of our people and please call Mr. Shamoon Yar Khan and ask him to resolve our this issue. 0345 5014 036 and 0346 567 8888 and you can also call Mr Azhar Jadoon 0321 9842007, Shahid Khaqan Abbasi 0515652000-03008282942

بخد مت جناب گرامی القدر عزت مآب جناب وزير اعلی پنجاب
با وساطت: سردار مہتاب احمد خان (سابق وزير اعلی سرحد)

استدعا : منظوری ٹول ٹيکس استثنی براۓ ملحقہ علاقہ جات مری
گزارش ہے کہ مری سے ملحقہ سرکل بکوٹ و سرکل لورا گزشتہ ايک صدی سے لسانی ، ثقافتی ، جغرافيائ اور ہر لحاظ سے مری سے ملحق ہيں اور کئ دھائیوں سے ان علاقوں کو بجلی ، ٹيليفون کی فراہمی اور تمام کاروبار زند گی مری سے چل رہا ہے۔ تحصيل مری اور سرکل بکوٹ و لورا کے درميان راشن اور پانی کی ترسيل کا ايک تاريخی معائدہ بھی موجود ہے جس کے تحت سرکل بکوٹ و سرکل لورا آج تک مری کو مفت پانی فراہم کر رہا ہے جب کے تحصيل مری کے مختص کردہ راشن ميں سرکل بکوٹ و لورا بھی شريک ہيں ۔ دونوں اطراف سے ہزاروں لوگ روزانہ دونوں اطراف آتے جاتے ہيں ، مگر حکومت پنجاب کی نگرانی ميں چلنے والا سترہ ميل ٹول پلازہ عوامی راستے کی راہ ميں ايک بڑی رکاوٹ ہے روزانہ آنے جانے والی سيکڑوں گاڑياں ٹول ٹيکس کی ادائيگی پر مجبور ہيں اور يہاں بلا جواز ٹيکس کے باعث جگھڑے معمول بن چکے ہيں۔
يہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ سرکل بکوٹ و سرکل لورا سے ملحقہ کشمير کے لوگ اس ٹيکس سے تو مثتثنی ہے تاہم ہميں اس ميں نظر انداز کيا گيا ہے ۔
آپ سے التماس ہے کہ سرکل بکوٹ ، سرکل لورا کے ديہاتوں کو اس ٹيکس ميں معافی کے احکامات جاری کئے جائيں۔
اميد ہے کہ آپ کی عوامی حکومت اس ديرينہ عوامی مطالبے پر عمل در آمد کر سکے گی۔
العارض
عبدالرحمان عباسی

[03/27/14]   Its requested to all you that please share this love page with your friends or atleast on your time line.. :)

[03/24/14]   Read Complete and feel the depth of Poetry
ﺍِﺳﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ)
ﺗﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
(ﻣﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
"ﻣﻄﯿﻊ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﻋﺒﺎﺳﯽ ﺑﯿﺮﻭﭦ"
After Reading please pray that soul of Mr. Mati Abbasi May Rest in Peace, Aameen!.

یہ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﺳﻮﭼﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻢ
ﯾﮧ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﺳﻮﭼﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ
ﯾﮧ ﺳﺐ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ
ﮐﮩﺎﮞ ﺳﺐ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮩﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﻮ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ
ﮐﮩﺎ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ
ﻣﮕﺮ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﮨﮯ
ﮐﮩﺎ ﮐﭽﮫ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ
ﺫﺭﺍ ﺑﺪﻻﺅ ﺍٓﻧﮯ ﺩﻭ
ﻧﮑﮭﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﻨﻈﺮ ﺑﮭﯽ
ﻭﻓﺎ ﮐﯽ ﻃﺎﻗﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﻢ
ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﮐﻮﻥ ﺟﺎﻧﮯ ﮔﺎ
)۲ (
ﻗﯿﺎﻣﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ
ﮔﺮﻓﺘﺎﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﯿﮟ
ﮨﯿﮟ ﺍﮎ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﮎ ﺟﯿﺴﮯ
ﺍﮔﺮ ﻣﺎﻧﯿﮟ ﺗﻮ ﻣَﻦ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﻧﮧ ﻣﺎﻧﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﮐﮍ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﺟﻮ ﺟﯽ ﻣﯿﮟ ﺍٓﺋﮯ ﮐﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﺲ ﻣُﮑﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﮔﺮ ﺷﮑﻦ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ
ﺗﻮ ﺳﻮ ﺳﻮ ﺩﻥ ﻧﮧ ﮔﮭﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﭼﻠﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺳﯽ ﺭُﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮭﮍﺗﮯ ﮨﯿﮟ
)۳ (
ﺍﮔﺮ ﺟﯿﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﭘﮍ ﺟﺎﺋﮯ؟
ﺗﻮ ﺟﯽ ﻟﯿﮟ ﮔﮯ، ﺟﯽ ﺟﯽ ﻟﯿﮟ ﮔﮯ
ﺳﮩﺎﺭﺍ ﻣﻞ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ
ﮐﺌﯽ ﺑﮯ ﺟﺎﻥ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﺎ
ﻣﺠﮭﮯ ﺧﻮﺵ ﺭﻧﮓ ﺩﻭﭘﭩﮯ
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮯﺭﻧﮓ ﺑﻨﯿﺎﻧﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﮯ ﺩﻭﭘﭩﮯ
ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮯ ﺑﻮ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﻧﯿﮟ
ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺳﯽ ﺭُﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮭﮍﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﭼﻠﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺳﺒﮭﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﺍﺏ ﮨﻢ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
ﮐﮧ ﺍﺏ ﮨﻢ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
)۴ (
ﻧﮩﯿﮟ ،ﺗﻢ ﺧﻮﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
ﻧﮩﯿﮟ ، ﺗﻢ ﺧﻮﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻢ ﺧﻮﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
ﯾﻘﯿﻨﺎ ﺧﻮﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﮯ
ﭼﻠﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ’’،،
ﯾﮧ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﺍٓﺋﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ
ﭘﮧ ﮨﯿﮟ ﺭﺍﮦِ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ
)۵ (
ﺍﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﮐﺎﻡ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﯿﮟ
ﺍﺑﮭﯽ ﻧِﻨﺪﺭﮮ ﭼﮑﺎﻧﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﺑﻮﺟﮫ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﭨﮭﺎ ﻻﺅﮞ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﺍٓﺩﮬﺎ
ﺍﻭﺭ ﺍٓﺩﮬﺎ ﺗﻢ ﺍﭨﮭﺎ ﻻﻧﺎ
ﻧﮩﯿﮟ ﺍٓﺩﮬﮯ ﺳﮯ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﮐﻢ
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎ ﻟﻮﮞ ﮔﺎ
ﺗﻢ ﺍﺱ ’ﮐﻢ ، ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﻨﮯ ﺩﻭ
ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﭘﮭﯿﺮﮮ ﻟﮕﺎ ﻟﻮﮞ ﮔﺎ
ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﮐﭽﮫ ﺩﻭﺭ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﻣﻞ ﺟﻞ ﮐﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ
)۶ (
ﺍﺑﮭﯽ ﮔﺮﻣﯽ ﮐﺎ ﻣﻮﺳﻢ ﮨﮯ
ﺍﺑﮭﯽ ﺟﺎﮌﺍ ﺑﮭﯽ ﺍٓﺋﮯ ﮔﺎ
ﺑﻼ ﺳﮯ ﻟﮑﮫ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﮨﻮ
ﻣﮑﺎﮞ ﮐﭽﺎ ﮨﯽ ﺭﮨﻨﺎ ﮨﮯ
ﺍﮎ ﺍﻭﻭﻥ! ﮨﺎﮞ ﻧﯿﺎ ﺍﻭﻭﻥ
ﻧﯿﺎ ﺍٓ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﭘﻞ ﻣﯿﮟ
ﮐُﻤﮩﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻧﻔﺎﺳﺖ ﮐﯽ
ﻧﺸﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺍٓﺋﮯ ﮔﯽ
ﮐﮧ ﺍﻥ ﻓﻨﮑﺎﺭ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﯽ
ﻧﺸﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺍٓﺋﮯ ﮔﯽ
ﺍﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﻨﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﻭﺡ ﮐﺎ ﺗﮭﻮﮌﺍ
ﺳﺎ ﺍﮎ ﺣﺼﮧ ﮐُﻤﮩﺎﺭﯼ ﮨﮯ
)۷ (
ﭨﮭﭩﮭﺮ ﮐﮯﺟﺐ ﻣﺮﯼ ﺳﮯ ﮨﻢ
ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﻟﻮﭨﯿﮟ ﮔﮯ
ﻣﯿﮟ ﺩﺳﺘﯽ ﭼﺎﺋﮯ ﺭﮐﮫ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ
ﭘﺮﺍﭨﮭﺎ ﺗﻢ ﭘﮑﺎ ﺩﯾﻨﺎ
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺩﯾﺮ ﮔﭗ ﮨﻮ ﮔﯽ
ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ ، ﺗﻮ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ ﮔﮯ
ﮐُﻤﮩﺎﺭ ﺍﺗﻨﮯ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﺗﻨﮯ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﯿﮟ
)۸ (
ﺫﺭﺍ ﺳﺮﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﺑﭽّﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ
ﺫﺭﺍ ﮔﻮﺑﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮔﮯ
ﮐﮧ ﮨﺮ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﯾﮟ
ﮐﺴﯽ ﺑﺪﺑﻮ ﺳﮯ ﺍﭨﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ
)۹ (
ﻣﯿﺮﯼ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺩﯾﮑﮭﻮ!
ﻣﺮﮮ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﻧﮯ!
ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻧﺎﻡ ﮐﺎ ﻋﻤﺮﮦ !
ﺑﮭﯽ ﮐﺮ ﮈﺍﻻ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺗﮏ!
ﻭﮦ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺑﻮﻝ ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ !
ﺫﺭﺍ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺍٓﻧﮯ ﺩﻭ
ﺫﺭﺍ ﻣﻮﺳﻢ ﺑﺪﻟﻨﮯ ﺩﻭ
ﺫﺭﺍ ﻧﺮﻏﮯ ﻣﯿﮟ ﺍٓﺟﺎﺋﮯ
ﮐﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﻮ ﺯﺑﺎﮞ ﺩﯾﻨﺎ
ﮨﻤﯿﮟ ﻣﺪﺕ ﺳﮯ ﺍٓﺗﺎ ﮨﮯ
ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﯿﮟ
ﻣﮕﺮﮐﭽﮫ ﯾﺎﺭ ﺟﺎﻧﮯ ﮨﯿﮟ
)۱۰ (
ﺑﮩﺖ ﮐﮭﯿﻠﮯ ﮨﯿﮟ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ
ﺑﮩﺖ ﺑﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﻮ
ﮨﻢ ﺍﺱ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺷﻨﺪﮮ
ﺟﺴﮯ ﺑِﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺟﮩﺎﮞ ﻣﻮﺳﻢ ﻧﮑﮭﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﭼﮍﯾﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ
ﺟﮩﺎﮞ ﺷﮩﺘﻮﺕ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ
ﭘﺮﺍﺋﮯ ﺩﯾﺲ ﺳﮯ ﻻﮐﮭﻮﮞ
ﭘﺮﻧﺪﮮ ﺭﻭﺯ ﺍٓﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﻓﺎﺧﺘﺎﺋﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ
ﺟﻮ ﺍٓﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ
ﺟﮩﺎﮞ ﺑﻠﺒﻞ ﮐﮯ ﮈﯾﺮﮮ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﻃﻮﻃﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﮭﯿﺮﮮ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﺗﯿﺘﺮ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﺍﻭﺭ ﺧﺮﮔﻮﺵ ﺑﮩﺘﯿﺮﮮ
ﺟﮩﺎﮞ ﮐﮯ ﺑَﻦ ﮐﮑﮍ ﺍﮐﺜﺮ
ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﮌ ﺍٓﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﺗﺘﻠﯽ ﺑﮭﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﺗﮭﯽ
ﺟﮩﺎﮞ ﭘﮑﮭﻠﻮ ﺑﮭﯽ ﭘﮭﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﮈﺑّﻮﮐﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ
ﯾﮩﺎﮞ ﮈﮈﺍﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﮨﻤﺎﺭﺍ ﮔﺎﺅﮞ ﺍﯾﺴﺎ ﺗﮭﺎ
ﺟﮩﺎﮞ ﺭﻧﮕﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﺵ ﺗﮭﯽ
ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﻧﻮﺭ ﺍﺗﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ
ﺟﮩﺎﮞ ﺑﺮﻓﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ
ﺟﮩﺎﮞ ﺍﻭﻟﮯ ﺑﮭﯽ ﮔﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ
ﺟﮩﺎﮞ ﺳﯿﺒﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﻏﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ
)۱۱ (
ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﻮ ﺍ ﮔﺎﺅﮞ
ﻣﯿﮟ ﺍﮎ ﻋﻔﺮﯾﺖ ﺍٓﻥ ﺍﺗﺮﺍ
ﺗﻌﺼﺐ ﮐﺎ ﺗﮑﺒﺮ ﮐﺎ
ﮐﮧ ﮔﻮﯾﺎ ﺳﻄﻮﺕ ﺷﺎﮨﯽ
ﺍﺳﯽ ﮐﮯ ﺩﻡ ﻗﺪﻡ ﺳﮯ ﮨﮯ
ﺗﻮ ﺍﺏ ﮔﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﮯ
ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺎﺧﺘﮧ ﻣﻠﺘﯽ
ﮨﮯ ﻧﮧ ﺑﻠﺒﻞ ﭼﮩﮑﺘﯽ ﮨﮯ
ﺍﺑﮭﯽ ﻣﻨﻈﺮ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﺍﺑﮭﯽ ﮔﺎﺅﮞ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﺍﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎﺷﺖ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ
ﺭﻭﺍﺟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﺗﻌﺼﺐ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﮐﮯ
ﻧﺼﺎﺑﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﮨﻢ ﺍﺱ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺷﻨﺪﮮ
ﺟﺴﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﻮ ﯾﮧ ﮔﺎﺅﮞ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﺑﮩﺖ ﭘﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﺳﮯ
ﺑﮩﺖ ﺑﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﻮ
ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﮯ
ﺭﻭﺍﺟﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﮨﮯ
ﻣﯿﺮﺍ ﺑِﯿﺮﻭﭦ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ
ﺳﯿّﺪ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﺳﯿّﺪ ﮨﻮ
ﻋﺒّﺎﺳﯽ ﮨﻮ ﻧﮧ ﻋﺒّﺎﺳﯽ
ﻗﺮّﯾﺸﯽ ﮨﻮﮞ ﻧﮧ ﻗﺮّﯾﺸﯽ
ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻮﭼﯽ، ﻧﮧ ﮨﻮ ﻣﻮﭼﯽ
ﺟﮩﺎﮞ ﻧﺎﺋﯽ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻧﺎﺋﯽ
ﺟﮩﺎﮞ ﻣُﻼ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻣُﻼ
ﺟﮩﺎﮞ ﺗﺮﮐﮭﺎﮞ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺗﺮﮐﮭﺎﮞ
ﺟﮩﺎﮞ ﮔﺠﺮ ﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﺠﺮ
ﺟﮩﺎﮞ ﺩﺭﺯﯼ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺩﺭﺯﯼ
ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﻮﮞ
ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﺭﺏ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ
’’ ﺗﻌﺎﺭﻑ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﻧﺎﻡ
ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ،،
ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ
ﺳﯿﺎﺩﺕ ﻣﻨﺪ ﺳﯿّﺪ ﺑﮭﯽ
ﺟﻮﺍﮞ ﮨﻤﺖ ﻋﺒّﺎﺳﯽ ﺑﮭﯽ
ﻭﮦ ﺍَﻋﻮﺍﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﺎﻟِﻢ ﺑﮭﯽ
ﺟﺮﺍﺕ ﻣﻨﺪ ﺑﮭﭩﯽ ﺑﮭﯽ
ﺷﺮﺍﻓﺖ ﮐﯿﺶ ﻗﺮّﯾﺸﯽ
ﻭﮦ ﺭَﺟﭙﻮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﺑﮭﯽ
ﻭﮦ ﻣﻐﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺮﺍﻓﺖ ﺑﮭﯽ
ﮨﻮﮞ ﺳﺎﺭﮮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺑﻨﺪ ﺍﯾﺴﮯ
ﮨﻮﮞ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﺤﺘﺮﻡ ﺍﯾﺴﮯ
ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﮔﺎﺅﮞ ﮨﮯ ﺟﯿﺴﮯ
ﮐﮧ ﺍﮎ ﺩﻭﺟﮯ ﮐﯽ ﭼﺎﮨﺖ ﻣﯿﮟ
ﺳﺒﮭﯽ ﮨﻠﮑﺎﻥ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﮞ
ﮐﮧ ﺍﮎ ﺩﻭﺟﮯ ﮐﯽ ﻋﺰﺕ ﮐﻮ
ﺳﺒﮭﯽ ﭘﺮﻧﺎﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﮞ
)۱ٍ۲ (
ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﺟﺐ ﻣﻮﺳﻢ ﺑﺪﻟﺘﺎ ﮨﮯ
ﭘﺮﻧﺪﮮ ﻟﻮﭦ ﺍٓﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺫﺭﺍ ﺩﮬﯿﺮﺝ ﮐﺮ ﺗﻢ ﺑﮭﯽ
ﭘﺮﻧﺪﮮ ﻟﻮﭦ ﺍٓﺋﯿﮟ ﮔﮯ
ﺫﺭﺍ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ
ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮ
ﯾﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﮔﺎﺅﮞ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﻮ
ﺳﺒﮭﯽ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﯾﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮔﺎﺅﮞ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ
ﺷﺮﺍﻓﺖ ﺭﺍﺝ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ
ﺍِﺳﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﯿﺮﻭﭦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﻣﻄﯿﻊ ﺍﻟﺮﺣﻤﻦ ﻋﺒﺎﺳﯽ ﺑﯿﺮﻭﭦ

[03/19/14]   مجھے بیروٹ کہتے ہیں ، تجھے بیروٹ کہتے ہیں :)

Location

Category

Telephone

Address

تحصیل و ضلع ایبٹ آبار
Abbottabad
46000
Other Tour Agencies in Abbottabad (show all)
Tour de North Tour de North
Flat#1 Old MCB Building, JabPul, Mansehra Road, Abbottabad.
Abbottabad, 22010

We are firm believers that travelling is all about the experience and it’s in the details – the places you stay, the transport and route that gets you there, and the people you meet along the way.

Hunza Hunza
Abbottabad
Abbottabad, 22620

Just see one time then you can't forget it..........

Luxury Ride Tours & Rent A Car Luxury Ride Tours & Rent A Car
Small Industre Chowk
Abbottabad, 0992

malik Hammad

My Abbottabad - ATD My Abbottabad - ATD
Abbottabad, 22010

ABBOTTABAD is one of the most beautiful city in Pakistan. It is located in the center of THE ORASH VALLEY in Northern area of Pakistan.

Abbottabad Chairlift Abbottabad Chairlift
Abbottabad Chairlift Ilyasi Masjid Road Nawansher
Abbottabad, 22010

Address: Abbottabad Chairlif Ilyasi masjid roadTownship Nawansher,Abbottabad Pakistan

Pak Arabian Travels PSA PIA Pak Arabian Travels PSA PIA
IQBAL SHOPPING COMPLEX THE MALL
Abbottabad, 22010

we deal all airline tickets

Global Strings Pakistan Global Strings Pakistan
Office 5-6, Silk Plaza
Abbottabad

Pakistan is rich in Domestic and International Tourism. We are promoting the real picture of Pakistan and its culture. Travel with us to Explore Pakistan!

Himalayan Trekkers Pakistan Himalayan Trekkers Pakistan
Kutton
Abbottabad, 13100

Himaliyan Trekkers Pakistan is not so simple. here you can get detailed information about all possible trekking routes in neelum valley, Kaghan Valley

Shahkot Abbottabad Shahkot Abbottabad
Shahkot
Abbottabad, 3735945

Abbottabad Online Abbottabad Online
The Mall
Abbottabad, 22010

Abbottabad Online is an informative website which include all news and newspapers of Abbottabad picnic spots and Educational Institutions

Sarban Travels - IATA Sarban Travels - IATA
1-2 Al-Madina Market CB-301Near UBL Building Branch Mansehra Road Abbottabad
Abbottabad, 22010

1.Air Tickets For All Airlines 2.Visa Arrangements 3.Hajj & Umrah Services 4.Recruitment For Work Visas 5.Other Related Services On Request

Hamara Hazara Hamara Hazara
Hamara Hazara, IT Park
Abbottabad, 22010

An online entertainment Portal specially for people of Hazara, our main focus is to shares stuff that will surprise you, inspire you, or just teach you